Press Release

31دسمبر کے بعد ریکس رجسٹر ڈ ایکسپو رٹر ز جی ایس پی پلس سے فائد ہ اٹھا سکیں گے۔ عرفان احمد سر وانہ

31دسمبر کے بعد ریکس رجسٹر ڈ ایکسپو رٹر ز جی ایس پی پلس سے فائد ہ اٹھا سکیں گے۔ عرفان احمد سر وانہکرا چی ( 2-08-2017) فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈ سٹری کے نائب صدر عرفان احمد سر وانہ نے ایکسپو رٹر ز پر زور دیا ہے کہ جی ایس پی پلس سے استفاد ہ کر نے کے لیے یو رپی یو نین کے آر ای ایکس ( ریکس ) سسٹم میں اندارج کو یقینی بنا ئیں تاکہ وہ یو رپی یو نین کو شپمنٹ آن اور ریجن خو د جا ری کر نے کے قابل ہو سکیں ۔ انہوں نے کہاکہ کہ یو رپی یو نین کی جی ایس پی سہو لت سے استفا دہ کے خو اہش مند ایکسپورٹرز کے لیے ضروری ہے کہ وہ آر ای ایکس سسٹم میں اندارج کرائیں کیو نکہ 31دسمبر 2017کے بعد صر ف آر ای ایکس سسٹم میں در ج شدہ ایکسپورٹرز کی شپمنٹ ہی جی ایس پی پلس کے زمر ے میں شما ر ہو گی۔ انہوں نے کہاکہ پاکستان کے لیے آرای ایکس سسٹم پر منتقلی کے لیے دسمبر 2017 کی ڈیڈ لا ئن مقر ر کی گئی ہے جس میں یو رپی یو نین کی منظو ری سے مز ید 6ماہ کا اضا فہ ہو سکتا ہے ۔ سیمینا ر میں ایف پی سی سی آئی کے نائب صدر ثا قب فیا ض مگو ں ،گلزار فیروزکے علاوہ ٹر یڈ ڈیو لپمنٹ اتھا رٹی کے کنسلٹنٹ کمال شہریا ر اور ڈائر یکٹر جنرل ڈاکٹر عثمان نے بھی شر کت کی ۔ اس موقع پر کما ل شہریا ر نے تفصیلی پر یز نٹیشن پیش کی جس میں ایکسپورٹرز کو آر ای ایکس سسٹم میں صرف ایک مر تبہ اندراج کرانا ہو گا جس کے بعد ٹر یڈ ڈیو لپمنٹ اتھا رٹی سر ٹیفکیٹ آف اور ریجن جا ری نہیں کر ے گی بلکہ خو د ایکسپورٹر ز اس سسٹم کے تحت اپنا سر ٹیفکیٹ جا ری کر یں گے ، آر ای ایکس سسٹم سلیف ریگو لیٹڈ ہے ۔ عرفانہ احمد سر وانہ نے کہاکہ آر ای ایکس کا نظا م پرانے نظا م سے بہت زیا دہ کا رگر ہے جس میں اندارج کے بعد ایکسپورٹرز کو سر ٹیفکیٹ کے حصول کے لیے ٹر یڈ ڈیو لپمنٹ اتھا رٹی کے دفا تر سے رجو ع نہیں کر نا پڑ ے گا۔

ڈاکٹر اقبال تھیم
قا ئم مقام سیکر یٹری جنرل ایف پی سی سی آئی